Saturday, June 27, 2015

Balochistan govt announces general amnesty for militants who lay down their arms

By Muhammad Zafar

June 26, 2015
CM Balochistan Dr Abdul Malik Baloch (L) chairing the meetin gof the provincial 
Apex Committee on Friday. PHOTO: NASEEM JAMES/EXPRESS


QUETTA: Balochistan Government on Friday extended a general amnesty for all militants, provided they lay down their arms. At the same time,  the resolve was reiterated to continue operation against those who chose not to surrender.

The provincial apex committee, during its meeting chaired by Chief Minister Dr Abdul Malik Baloch, reviewed the progress of the implementation of National Action Plan (NAP) in Balochistan. 

While taking into the consideration the reports and recommendations of the concerned authorities, the meeting also review the overall law and order situation of the province.

Besides chief minister, Provincial Home Minister Mir Sarfraz Bugti, Commander Southern Command General Nasir Janjua, Chief Secretary Balochistan Saifullah Chatta, General Commanding Officers, IG FC, Home Secretary, IG Police, Commissioner Quetta and other high officials were also present at the meeting.


The meeting expressed its satisfaction over the measures taken for coordination among all the concerned departments.

It was agreed during the meeting that miscreants, criminals and anti-social elements, would be given no concession and action against them would continue.

In order to facilitate youngsters in renouncing violence and laying down their arms, the meeting agreed that a Peaceful Conciliatory Balochistan Policy would be implemented for the rehabilitation of those who surrendered.

On the issue of registration of religious seminaries, it was decided that the education department would complete their registration, while the meeting also agreed that the provincial government would apprise the federal government about its stance on the issue of Afghan refugees.

To check terror funding in the province, the meeting decided that the police, FIA and NAB would investigate the financial sources of terrorist organisations. Elements found involved would be dealt in accordance with the law.

During the meeting, reports on recent terror activities in Quetta were also reviewed. Commissioner Quetta apprised them of details regarding the security provided to buses.

Emphasising on the capacity building of Levies Force, the meeting issued directions to provincial home department in this regard.

http://tribune.com.pk/story/910477/balochistan-govt-announces-general-amnesty-for-militants-who-lay-down-their-arms/


بلوچستان: ہتھیارڈالنے والوں کیلئے عام معافی کا اعلان

کوئٹہ ( سنگر نیوز)بلوچستان کی اپیکس کمیٹی نے کہا ہے کہ جو نوجوان ریاست کے خلاف مسلح کارروائی ترک کرنے کا یقین دلائیں ان کو عام معافی دی جائے گی۔اپیکس کمیٹی کا اجلاس وزیر اعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ کی زیر صدارت جمعہ کے روز منعقد ہوا۔ایک سرکاری اعلامیے کے مطابق اجلاس میں صوبائی وزیر داخلہ میر سرفراز بگٹی، کمانڈر سدرن کمانڈ لیفٹیننٹ جنرل ناصر جنجوعہ، چیف سیکریٹری بلوچستان سیف اللہ چٹھہ، جنرل کمانڈنگ آفیسرز، آئی جی ایف سی، سیکریٹری داخلہ، آئی جی پولیس اور دیگر متعلقہ حکام نے شرکت کی۔اجلاس میں نیشنل ایکشن پلان کا جائزہ لیا گیا اور دہشت گردوں اور شرپسندوں کے خلاف موثر کارروائی جاری رکھنے کا فیصلہ کیا گیا۔اجلاس میں بلوچستان میں امن و امان کی صورتحال، متعلقہ اداروں کی اس حوالے سے تجزیاتی رپورٹوں اور سفارشات کا جائزہ لیا گیا۔اعلامیے میں کہا گیا ہے کہ اجلاس میں اس امر پر اطمینان کا اظہار کیا گیا کہ متعلقہ اداروں کے باہمی اشتراک سے عوام کے جان و مال کی حفاظت کے لیے کیے گئے اقدامات سے عوام میں احساس تحفظ پیدا ہوا ہے۔اعلامیے میں کہا گیا کہ جرائم پیشہ، ناپسندیدہ عناصر اور شر پسندوں کے خلاف جاری کارروائیوں کے حوصلہ افزا نتائج سامنے آ رہے ہیں۔ایپکس کمیٹی نے بلوچستان میں امن و عامہ کو مستقل بنیادوں پر قائم کرنے کی ضرورت کا تفصیلی جائزہ لیا۔ ملکی سطح پر دینی مدارس کی تنظیم نو اور رجسٹریشن، افغان مہاجرین سے متعلق صوبائی حکومت کے موقف اور دہشت گردی کی کارروائیوں میں استعمال ہونے والے فنڈز کی تحقیقات سے متعلق امور کا تفصیلی جائرہ لیا گیا۔ مدارس کی رجسٹریشن کا عمل محکمہ تعلیم کے توسط سے مکمل کیا جائے گا، جبکہ افغان مہاجرین کے حوالے سے صوبائی حکومت کے موقف سے وفاقی حکومت کو آگاہ کیا جائے گا۔ اس سلسلے میں پرامن بلوچستان مفاہمتی پالیسی پر عملدرآمد کا فیصلہ کیا گیا تاکہ وہ نوجوان جو ریاست کے خلاف مسلح کارروائی ترک کرنے کا یقین دلائیں ان کو عام معافی دی جائے گی اور حکومت ان کی بحالی کے لیے مالی مدد کرے گی۔اجلاس میں ملکی سطح پر دینی مدارس کی تنظیم نو اور رجسٹریشن، افغان مہاجرین سے متعلق صوبائی حکومت کے موقف اور دہشت گردی کی کارروائیوں میں استعمال ہونے والے فنڈز کی تحقیقات سے متعلق امور کا بھی تفصیلی جائرہ لیا گیا۔اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ مدارس کی رجسٹریشن کا عمل محکمہ تعلیم کے توسط سے مکمل کیا جائے گا، جبکہ افغان مہاجرین کے حوالے سے صوبائی حکومت کے موقف سے وفاقی حکومت کو آگاہ کیا جائے گا۔ایف آئی اے، کسٹم، نیب اور پولیس کے ذریعے شدت پسندی کی کارروائیوں میں استعمال ہونے والے وسائل اور فنڈنگ کی تحقیقات کرائی جائیں گی اور ان میں ملوث پس پردہ عناصر کو عوام کے سامنے لایا جائیگا اور انہیں قانون کے مطابق سزا دلائی جائے گی۔اجلاس میں شدت پسند مذہبی کالعدم تنظیموں کے خلاف کارروائی کو مزید موثر بنانے پر اتفاق کیا گیا۔اجلاس میں مستونگ کھڈ کوچہ کے المناک واقعے میں ملوث عناصر کے خلاف ایف سی کی کاروائی کا بھی جائزہ لیا گیا اور اس پر اطمینان کا اظہار کیا گیا۔کمشنر کوئٹہ ڈویڑن نے مسافربسوں کے سیکورٹی انتظامات کے حوالے سے اجلاس کو تفصیلات فراہم کیں۔

http://dailysangar.com/بلوچستان-ہتھیارڈالنے-والوں-کیلئے-عام/

1 comment:

  1. THANK YOU HONORABLE Chief Minister of Balochistan Dr. Malik Baloch.

    Baloch Council of North America (BCNA) WELCOME the announcement of general amnesty to all Baloch Militants by the Government of Balochistan and asks the militants to immediately cease the opportunity and take full advantage of the positive and sincere gesture of the government and declare a unilateral cease fire, lay down their arms, shun the path of violence and militancy and join hands with the democratic forces to secure the Baloch genuine rights through peaceful and non-violent means of struggle.

    Balochs are patriotic Pakistani and they must work for the betterment of their country and not be misguided by few paid indian agents who themselves are enjoying luxury life in Europe but want the ordinary Baloch to fight their dirty war of business. Balochistan needs peace and prosperity not war and violence.

    Those who incite violence and support terrorism in Balochistan are not friend of Baloch people but are the real enemies of Baloch. They must be denounced, challenged, countered and defeated.

    ReplyDelete