Sunday, January 11, 2015

Quetta women’s convention: Maternal mortality rate is embarrassing, says Dr Malik


By Shezad Baloch

January 11, 2015

Balochistan CM says over 1.8 million children out of schools; doctors teachers drawing salaries but not working.

QUETTA: Balochistan Chief Minister Dr Abdul Malik Baloch said on Saturday that both school enrolment and maternal mortality figures in the province were highly inadequate and embarrassingly low.

More than 1.8 million children are out of school in Balochistan while maternal mortality rate is the highest among the four provinces.

Dr Malik was addressing the National Women Conference organised by the ruling National Party’s Women Wing in Quetta. Women leaders and workers of the party from across Balochistan attended the conference.

“There are different statistics regarding the children who do not go to school in Balochistan. It is the responsibility of the National Party (NP) workers to join hands with the government to improve the enrolment,” he said.

The CM announced that his government would soon launch a campaign to increase the enrolment of children in schools.

The government will launch a “School Bharo Campaign” during the month of March 2015. “It is the responsibility of every member of the party to make sure that teachers in their respective districts attend schools, “if not, just tell me,” he said adding, “There will be zero tolerance towards phantom teachers and doctors.”

The Balochistan government has already launched Education Management and Information System (EMIS) website. EMIS is designed to contain data about all educational institutes in Balochistan, the chief minister said.

The main benefit of EMIS website is that it will help in identifying ghost schools and absent teachers. “The website is effectively monitoring the situation in Quetta while it will soon be extended to across the province,” he said.

Alarming figure

The top executive of the province said it was deplorable that so many women die during child birth and even a greater number of children die from preventable diseases.

“The maternal mortality rate is higher and alarming in Balochistan. This is quite embarrassing for us in the world,” he said. “The children are dying from preventable diseases like measles. We have a thousand vaccinators. We can save the lives of children, if all the vaccinators perform their duties,” he said.

According to the provincial health department, as many as 785 out of 100,000 mothers lose their lives during pregnancy in Balochistan as compared with 272 in the rest of the country.

He lauded the efforts of women workers of the party. “The women in our party have played a more important role than men during the election campaign,” the NP chief said.

Women leaders from Sohbatpur, Nasirabad, Jaffarabad and Sibi districts in their speech criticised the health department for being ignorant to mother and child health issues.

At least 80 per cent people in Nasirabad and Sibi division are suffering from hepatitis B and C. Women are dying during the pregnancy, they said.

Women activists said that teachers have been drawing salaries without attending classes in Naushki, Chagai and Panjgur. “Female doctors are not available at Gynaecology Wards of the district headquarter hospitals of in Naushki, Chagai and Panjgur. Women in these areas are facing immense trouble and hardship,” said activist Shazia Noor.

Women activists submitted reports of 28 districts of Balochistan regarding the party performance and problems. Around 400 women attended the conference.

Women leaders of the party demanded equal status in decision making set-up of the National Party.

Published in The Express Tribune, January 11th, 2015.

http://tribune.com.pk/story/819976/quetta-womens-convention-maternal-mortality-rate-is-embarrassing-says-dr-malik/



خواتین کی معاشرتی، سیاسی اور سماجی شعبوں میں بھرپور شرکت کے بغیر ترقی کا سفر ممکن نہیں' ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ


January 10, 2015 8:01pm 


کوئٹہ: وزیراعلیٰ بلوچستان ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کہا ہے کہ خواتین کی بھرپور شرکت کے بغیر کوئی بھی معاشرہ ترقی نہیں کرسکتا۔ پارٹی کو تقرریوں اور تبادلوں کی بجائے بلوچستان کو تعلیم اور صحت کے شعبوں کی بہتری کے لئے انقلابی اقدامات کی ضرورت ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے نیشنل پارٹی خواتین کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ نے کہا کہ نیشنل پارٹی کو اس کی خواتین ونگ ہی دوسری جماعتوں سے ممتاز بناتی ہے اور ترقیافتہ دنیا کا یہ مسلمہ اصول ہے کہ خواتین کی معاشرتی، سیاسی اور سماجی شعبوں میں بھرپور شرکت کے بغیر ترقی کا سفر ممکن نہیں۔ انہوں نے کہا کہ عوام کو مطمئن نہ کرنے کے باعث ملک اور بلوچستان میں جمہوریت بدنام ہوئی ہے۔ نیشنل پارٹی کو عوام کی ترقی وخوشحالی، فلاح وبہبود کے لئے بہتر نتائج دینے ہوں گے۔ کارکن تقرریوں اورتبادلوں میں خود کو نہ الجھائیں بلکہ پارٹی کو تعلیم وصحت، بیروزگاری کے خاتمے اور عوام کی مشکلات ومصائب کم کرنے کے لئے پالیسی دیں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ بلوچستان میں پیدائش کے دوران زچہ وبچہ کی شرح اموات انتہائی خطرناک حد تک زیادہ ہے۔ بلوچستان میں ایک ہزار سے زائد ویکسینٹر گھر بیٹھے تنخواہیں وصول کرتے ہیں جبکہ ہمارے بچے خسرہ کے وباء کے باعث موت کے منہ میں چلے جاتے ہیں۔ اگر مذکورہ ویکسینیٹر اپنے فرائض درست انجام دیں تو بلوچستان میں 98% بچوں کو ٹیکہ جات لگائے جاسکتے ہیں ۔ وزیراعلیٰ نے زور دیا کہ پارٹی کے کارکن عوام کو متحرک کرکے تعلیم اور صحت کے شعبوں میں بہتری کے لئے اپنا کردار ادا کریں۔ محکمہ صحت اور تعلیم میں غیرحاضر اسٹاف کی نشاندہی کریں۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت جلد بلوچستان میں اسکول بھروتحریک کا آغاز کرے گی۔ ہماری خواہش ہے کہ ایک بچہ بھی اسکول سے باہر نہ ہو۔انہوں نے کہا کہ اسکول میں اساتذہ کی حاضری کو یقینی بنانے کے لئے جدید نظام کوئٹہ سے متعارف کروایا گیا ہے اس کا دائرہ پورے صوبے تک بڑھایا جائے گا۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ خواتین کی نظریاتی وشعوری لحاظ سے تربیتی نشستوں کا بھی انعقاد کیا جائے جبکہ خواتین کی رکن سازی پر بھی خصوصی توجہ دی جائے۔ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نیشنل پارٹی کے مرکزی نائب صدر میرطاہر زنجونے کہا کہ مرد اور عورت میں سے کسی کا برتر اور کم تر کا فلسفہ کسی بھی لحاظ سے درست نہیں۔عورتوں میں صلاحیتوں کی کوئی کمی نہیں جب سماج بدلتا ہے تو انسان بھی تبدیل ہوتا ہے اور اسی طرح مرد کے بدلنے سے عورت پر بھی اس کے اثرات پڑتے ہیں عالمگیر تبدیلی کے طوفان نے انسان کی سوچ کو بدل دیا ہے۔ طاہر بزنجو نے کہا کہ بلوچ معاشرہ ہمیشہ سے لبرل رہا ہے یہاں خواتین پر تیزاب پھینکنے یا جبری نکاح کا کوئی سوچ بھی نہیں سکتا۔ ہمارے معاشرے میں انتہا پسندی اور شدت پسندی کا کوئی تصور نہیں تھا۔ یہ سب کچھ ایک ایجنڈے کے تحت ہم پر مسلط کرنے کی کوشش کی گئی ہے۔ کانفرنس سے رکن صوبائی اسمبلی ونیشنل پارٹی کی مرکزی سیکرٹری خواتین ونگ ڈاکٹر شمع اسحاق بلوچ، رکن صوبائی اسمبلی یاسمین لہڑی نے بھی خطاب کیا۔ کانفرنس میں 28اضلاع کی خواتین سیکریٹریز نے اپنے اپنے اضلاع کی رپورٹ پیش کی جبکہ کانفرنس میں چار سو سے زائد خواتین مندوبین شریک تھیں۔

SOURCE: Facebook

No comments:

Post a Comment